انڈیا سے ’ڈانسنگ گرل آف موہنجودڑو‘ کی واپسی کا مطالبہ

انڈیا سے ’ڈانسنگ گرل آف موہنجودڑو‘ کی واپسی کا مطالبہ

 نیشنل کونسل آف آرٹس کے سربراہ، معروف مصور اور اداکار جمال شاہ نے کہا ہے کہ وہ یونیسکو کے ذریعے انڈیا سے ‘ڈانسنگ گرل’ کے مجسمے کی واپسی کا مطالبہ کریں گے اور اس سلسلے میں قانونی چارہ جوئی کا آغاز بھی کر دیا گیا ہے۔

جمال شاہ نے کہا کہ ‘ڈانسنگ گرل’ کا مجسمہ موہنجودڑو سے دریافت ہوا تھا اور اس کو تقسیم ہند سے قبل ایک نمائش کے لیے انڈیا لے جایا گیا اور یہ کبھی واپس نہیں کیا گیا۔ انھوں نے کہا کہ ‘ڈانسنگ گرل’ مجسمہ پاکستان کا مستند ورثا ہے جو سندھ کی زمین موہنجودڑو سے کھدائی کے دوران ملا تھا۔ ‘میں تو کئی بار اس بات کا مطالبہ کر چکا ہوں بطور پاکستانی اور ایک آرٹسٹ کے کہ اس مجسمے کی واپسی کا مطالبے کیا جائے۔ لیکن اب پاکستان نیشنل کونسل آف آرٹس کے ڈائریکٹر جنرل کے ناطے میں اقوام متحدہ کے ادارے یونیسکو کے ذریعے انڈیا سے اس مجسمے کی واپسی کی کوشش کروں گا۔’

یاد رہے کہ ‘ڈانسنگ گرل’ مجسمہ اس وقت انڈیا کے دارالحکومت دہلی کے نیشنل میوزیئم میں ہے۔ انھوں نے اس تاثر کو رد کیا کہ اوڑی حملے کے بعد سے دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی کے باعث یہ مطالبہ کیا جا رہا ہے۔