پٹرولنگ چوکی سکھ پور میں تعینات اے ایس آئی نے روڈ گشت چھوڑ کر موٹر سائیکل سوروں کو نشانہ نانا شروع کر دیا

پٹرولنگ چوکی سکھ پور میں تعینات اے ایس آئی نے روڈ گشت چھوڑ کر موٹر سائیکل سوروں کو نشانہ نانا شروع کر دیا
حویلی لکھا:(رانا ظفر اقنال ) پٹرولنگ چوکی سکھ پور میں تعینات اے ایس آئی نے روڈ گشت چھوڑ کر موٹر سائیکل سوروں کو نشانہ نانا شروع کر دیا۔
جنازے میں جانے والوں سے دو سو کی ڈیمانڈ انکار پر بے عزت کر کے موٹر سائیکل بند سمیت جنازے میں شرکت کرنے والا بھی بند۔تھانیدار عابد حسین نے اختیارات کی آڑ میں دیہاڑی لگانی شروع کر رکھی ہے نوٹس لیا جائے سماجی حلقوں کا احتجاج میں کسی بھی موٹر سائیکل کو چیک کرنے کا اختیار رکھتا ہوں پیسے کسی کانٹیبل نے مانگے ہونگے۔
تھانیدار کا موقف۔تفصیلات کے مطابق۔مقامی رہائشی محمد امین شیخ اپنی ہمشیرہ کے ہمراہ ،بسواری موٹر سائیکل نانے کے جنازے میں شرکت کے لیے جا رہا تھا کہ چوک پپیلی پہاڑ کے قریب چوکی سکھ پور میں تعینات اے ایس آئی عابد حسین پٹرولنگ پولیس نے ہمراہ کانسٹیبلان روک لیااور فوری موٹر سائیکل کی چابی نکال کر کبھی موٹر سائیکل کے کا غذات اور کبھی لائسنس مانگنے لگا جس پر محمد امین نے کاغذات دکھاتے ہوئے منت سماجت کی کہ میرے حقیقی نانے کا جنازہ ہے اور لیٹ ہو رہا ہوں خدا راہ میرے ساتھ خواتین ہیں مجھے جانے دو
مگر اختیارات کے نشہ میں چور مذکورہ تھانیدار نے ایک نہ سنی اور دو سو روپے دینے سے انکار کرنے پر محمد امین کی ہمشیرہ کو وہیں چھوڑ کر موٹر سائیکل سمیت محمد امین کو بند کر دیا اور جیب سے نقدی و موبائل نکال لیا۔محمد امین کی ہمشیرہ پٹرولنگ پولیس کے مذکورہ تھانیدار کی زیادتی کی وجہ سے کئی کلو میٹر پیدل چل کر گھر پہنچی۔اس سلسلہ میں جب مختلف سماجی راہنماؤں ،چوہدری عبدالرحمن،محمد عثمان،محمد احمد سے بات کی گئی تو انہوں نے بتایا کہ مذکورہ تھانیدار نے وطیرہ بنا رکھا ہے موٹر سائیکلوں کو چیک کرنے کی آڑ میں لمبی دیہاڑی لگائی جاتی ہے خواتین کے تقدس کو پامال کرتے ہوئے چند ٹکوں کی رشوت نہ ملنے پر موٹر سائیکل بند کر دیتا ہے
جسکی وجہ سے خواتین اور بچوں کو کئی کئی کلومیٹر پیدل چلنا پڑتا ہے انہوں نے ،آئی جی پولیس اور ایس پی پٹرولنگ بابر بخت قریشی سے فوری نوٹس لیکر کاروائی کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔اس سلسلہ میں جب مذکورہ تھانیدار سے چوکی سکھ پور کے ٹیلی فون پر رابطہ کیا گیا تو انہوں نے کہا کہ موٹر سائیکل کو رضا کار بھی چیک کر سکتا ہے مجھے مکمل اختیارات ہیں رہی دو سو روپے مانگنے کی بات تو کسی کانسٹیبل نے مانگے ہونگے۔