پانامہ لیکس : اسد کھرل کی درخواست پر اٹارنی جنرل اور چیئرمین نیب کو نوٹسز جاری

پانامہ لیکس : اسد کھرل کی درخواست پر اٹارنی جنرل اور چیئرمین نیب کو نوٹسز جاری

اسلام آباد ( نمائندہ تہلکہ ٹی وی) سپریم کورٹ آف پاکستان نے پانامہ لیکس کیس کی سماعت کے دوران سینئر تحقیقاتی صحافی اسد کھرل کی درخواست پر اٹارنی جنرل اور چیئرمین نیب کو نوٹسز جاری کردیئے ۔
سماعت کے دوران سینئر تحقیقاتی صحافی اسد کھرل نے بتایا کہ عدالت کو بتایا کہ انہوں نے 25 اپریل 2016ء کو نیب کو وزیراعظم نواز شریف ، وزیر خزانہ اسحاق ڈار، وزیراعظم کی صاحبزادی مریم صفدر اور صاحبزادوں حسین نواز اور حسن نوازکے خلاف 24صفحات پر مشتمل درخواست نیب کو دے رکھی ہے جس کے ساتھ 500صفحات سے زائد دستاویزی ثبوت بھی منسلک کئے گئے ہیں، جن کے مطابق مجموعی طور پر 100 ارب روپے کی کرپشن ،کک بیکس، اختیارات کا ناجائز استعمال اور قومی خزانے کو اتنی بڑی رقم کا نقصان پہنچانے کے ثبوت موجود ہیں۔

asad-kharal

مذکورہ لوٹی ہوئی رقم سے وزیر اعظم نےاپنے بچوں کے نام پر پیرون ملک پراپرٹیز خریدیں، جن پراپرٹیز کا ذکرپانامہ پیپرز میں شامل ہے اورخریدی ہوئی پراپرٹیز میں لندن پارک لین کے فلیٹس بھی شامل ہیں۔ لہذا نیب سے جواب طلب کیا جائے کہ  25اپریل کو موصول ہونیوالی درخواست پر اس نے اب تک کیا کاروائی کی ہے۔ چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس انور ظہیر جمالی کی سربراہی میں سپریم کورٹ کےتین رکنی بینچ نے پانامہ پیپرز تحقیقات کے حوالےسے سینئر تحقیقاتی صحافی اسد کھرل کی درخواست CMA No6884 in Cont. Petition No26/2016 پراٹارنی جنرل اور چیئرمین نیب کو نوٹسز جاری کر دیئے ہیں۔