لاہور ہائیکورٹ میں ممکنہ گرفتاریوں کے خلاف سماعت کیلئے تین رکنی بنچ تشکیل دیدیا گیا

لاہور ہائیکورٹ میں ممکنہ گرفتاریوں کے خلاف سماعت کیلئے تین رکنی بنچ تشکیل دیدیا گیا

لاہور(ملک عمر دین)  ہائیکورٹ نے تحریک انصاف اور عوامی تحریک کے کارکنوں کی ممکنہ گرفتاریوں کے خلاف درخواست سماعت کیلئے تین رکنی فل بنچ کو بجھوا دی ہے اور فل بنچ 31 اکتوبر سے درخواست پر کارروائی کرے گا۔

چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ جسٹس منصور علی شاہ نے قانون دان اشتیاق اے چودھری نے عوامی تحرہک کی جانب سے درخواست دائر کی جس میں عوامی تحریک اور تحریک انصاف کے کارکنوں کی ممکنہ گرفتاریوں کو چیلنج کیا گیا ہے۔ چیف جسٹس نے درخواست ہائیکورٹ کے سینیر ترین جج جسٹس شاہد حمید ڈار کی سربراہی میں قائم تین رکنی بنچ کو بھجوا دی۔ بنچ پہلے سے دو نومبر کو اسلام آباد بند کرنے کے اعلان کے خلاف درخواست پر سماعت کر رہا ہے۔

کارروائی کے دوران درخواست گزار وکیل نے موقف اختیار کیا کہ حکومت تحریک انصاف کے دو نومبر کو احتجاج ناکام بنانے کے لئے اوچھے ہتھکنڈوں استعمال کر رہی ہے پولیس کو تحریک انصاف۔اور عوامی تحریک کے کارکنوں کی گرفتاری کی پکڑ دھکڑ کےلیے ان کے گھر پر چھاپے مار رہی ہے۔ وکیل کے مطابق کہ پولیس نے دونوں جماعتوں کے کارکنوں کو ہراساں کرنا شروع کر دیا ہے. وکیل نے نکتہ اٹھایا کہ آئین کے تحت احتجاج بنیادی حق ہے کوئی جرم نہیں. درخواست میں استدعا کی گئی نے استدعا کی کہ تحریک انصاف اور عوامی تحریک کے کارکنوں کی گرفتاریاں روکنے اور انہیں ہراساں کرنے سے روکا جائے۔