چینی حکومت نے نواز شریف کی نااہلی پر اسے پاکستان کا اندرونی معاملہ بولا تھا۔ اور کہا تھا کہ نا اہلی سے سی پیک کوئی فرق نہیں پڑے گا

چینی حکومت نے نواز شریف کی نااہلی پر اسے پاکستان کا اندرونی معاملہ بولا تھا۔ اور کہا تھا کہ نا اہلی سے سی پیک کوئی فرق نہیں پڑے گا۔ مگر نواز شریف پتا نہیں کیوں ان سب کا زبردستی کریڈٹ لینے پر بضد ہیں۔۔ نواز شریف نے کہا کہ میں نے یہاں سی پیک شروع کیا جس سے لوگوں کو روزگار مل رہا ہے لیکن نااہلی کے اس طرح کے فیصلے ملک کو 50 سال پیچھے دھکیل دیتے ہیں جب کہ میں یہاں وزیراعظم بننے نہیں آیا اور نہ خود کو بحال کرانے آیا ہوں بلکہ پاکستان کی عزت اور وقار بحال کرانے آیا ہوں اور پاکستان کی یہ توہین مزید برداشت نہیں کریں گے، اس قت تک چین سے نہیں بیٹھوں گا جب تک نوجوانوں کو باعزت روزگار نہیں ملتا، آپ کے ووٹ کا احترام ہو گا تو آپ کو حقوق ملیں گے اور ترقی عروج پر جائے گی، میرا ساتھ دو آؤ مل کر پاکستان کو بدل دیں۔سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ 70 سالوں سے یہ تاریخ رہی ہے جو بھی وزیراعظم آیا اسکو ذلیل کر کے نکالا گیا، پاکستان کا امن راس نہیں آیا، کیا 20 کروڑعوام کے ووٹ کی کوئی عزت ہے یا نہیں، کچھ لوگوں کو پاکستان کی ترقی برداشت نہیں ہوئی کیوں کہ یہ لوگ سوچ رہے تھے کہ نواز شریف کامیاب ہو گیا تو 2018 میں دوبارہ آ جائے گا۔